آسماں گر ترے تلووں کا نظارہ کرتا​

نعت خواں:

آسماں گر ترے تلووں کا نظارہ کرتا​
روز اک چاند تصدق میں اُتارا کرتا​

طوفِ روضہ ہی پہ چکرائے تھے کچھ ناواقف​
میں تو آپے میں نہ تھا اور جو سجدہ کرتا​

صَرصرِ دشتِ مدینہ جو کرم فرماتی​
کیوں میں افسردگیِ بخت کی پرواہ کرتا​

چھپ گیا چاند نہ آئی ترے دیدار کی تاب​
اور اگر سامنے رہتا بھی تو سجدہ کرتا​

یہ وہی ہیں کہ گرِو آپ۔۔ اور ان پر مچلو​
اُلٹی باتوں پہ کہو کون نہ سیدھا کرتا​

ہم سے ذرّوں کی تو تقدیر ہی چمکا جاتا​
مہر فرما کے وہ جس راہ سے نکلا کرتا​

دُھوم ذرّوں میں اناالشمس کی پڑ جاتی ہے​
جس طرف سے ہے گزر چاند ہمارا کرتا​

آہ کیا خوب تھا گر حاضرِ دَر ہوتا میں​
اُن کے سایہ کے تلے چین سے سویا کرتا​

شوق وآداب بہم گرمِ کشاکش رہتے​
عشقِ گم کردہ تواں عقل سے اُلجھا کرتا​

آنکھ اُٹھتی تو میں جھنجھلا کے پلک سی لیتا​
دِل بگڑ تا تو میں گھبرا کے سنبھالا کرتا​

بے خودانہ کبھی سجدہ میں سوے دَر گرِتا​
جانبِ قبلہ کبھی چونک کے پلٹا کرتا​

بام تک دل کو کبھی بالِ کبوتر دیتا​
خاک پر گر کے کبھی ہائے خدایا کرتا​

گاہ مرہم نہیِ زخمِ جگر میں رہتا​
گاہ نشتر زنیِ خونِ تمنا کرتا​

ہم رہِ مہر کبھی گردِ خطیرہ پھرتا​
سایہ کے ساتھ کبھی خاک پہ لوٹا کرتا​

صحبتِ داغِ جگر سے کبھی جی بہلاتا​
اُلفتِ دست و گریباں کا تماشا کرتا​

دلِ حیراں کو کبھی ذوقِ تپش پہ لاتا​
تپشِ دل کو کبھی حوصلہ فرسا کرتا​

کبھی خود اپنے تحیّر پہ میں حیراں رہتا​
کبھی خود اپنے سمجھنے کو نہ سمجھا کرتا​

کبھی کہتا کہ یہ کیا بزم ہے کیسی ہے بہار​
کبھی اندازِ تجاہل سے میں توبہ کرتا​

کبھی کہتا کہ یہ کیا جوشِ جنوں ہے ظالم​
کبھی پھر گر کے تڑپنے کی تمنا کرتا​

ستھری ستھری وہ فضا دیکھ کے میں غرقِ گناہ​
اپنی آنکھوں میں خود اُس بزم میں کھٹکا کرتا​

کبھی رَحمت کے تصور میں ہنسی آجاتی​
پاسِ آداب کبھی ہونٹوں کو بخیہ کرتا​

دل اگر رنجِ معاصی سے بگڑنے لگتا​
عفو کا ذکر سنا کر میں سنبھالا کرتا​

یہ مزے خوبیِ قسمت سے جو پائے ہوتے​
سخت دیوانہ تھا گر خلد کی پروا کرتا​

موت اُس دن کو جو پھر نام وطن کا لیتا​
خاک اُس سر پہ جو اُس در سے کنارا کرتا​

اے حسنؔ قصدِ مدینہ نہیں رونا ہے یہی​
اور میں آپ سے کس بات کا شکوہ کرتا​


مزید اردو نعتیں

Leave a Comment