میرے مولا کرم ہو کرم


جائیں تو کہاں جائیں تیرے در کے سوا مولا
تیرے در کے سوا مولا
تسکین کہاں پائیں
تیرے در کے سوا مولا
اس دنیا پہ تیرے کرم کا سایہ
دامن کہاں پھیلائیں
تیرے در کے سوا مولا


میرے مولا کرم ہو کرم
تجھ سے فریاد کرتے ہیں ہم
میرے مولا کرم ہو کرم
میرے مولا کرم ہو کرم

یہ زمیں اور یہ آسما
تیرے قبضے میں ہیں دو جہاں
سب پہ تو ہی تو ہے مہرباں
ہم تیرے در سے جائے کہاں
سب کی سنتا ہے تو ہی صدا
تو ہی رکھتا ہے سب کا بھرم
میرے مولا کرم ہو کرم
میرے مولا کرم ہو کرم

بے کسوں کو سہارا ملے
ڈوبتوں کو کنارا ملے
سر سے طوفان پل میں ٹلے
جو تیرا یک اشارا ملے
تو جو کر دے مہربانیاں
دور ہو جائے ہر ایک غم
میرے مولا کرم ہو کرم
میرے مولا کرم ہو کرم


مزید اردو نعتیں

Leave a Comment